اہم خبریں

40ہزار بھرتیاں ، حکومت نے ہوم ورک شروع کردیا

  جمعرات‬‮ 14 فروری‬‮ 2019  |  17:30
کراچی(این این آئی)حکومت سندھ میں 40 ہزار خالی اسامیوں پر بھرتیاں کے لئے ہوم ورک شروع کردیا ،تاہم ماضی میں پیپلز پارٹی کی حکومت پر غیر قانونی بھر تیوں کے الزام پر مقدمات کے بعد اب حکومت سندھ نے سرکاری بھر تیوں کے لئے جامع ،محتاط اور قانونی حکمت عملی ترتیب دی، تاکہ تقرریوں کے بعد بھرتیاں غیر قانونی قرار نہیں دی جاسکیں ، اس سلسلے میں حکومت سندھ نے خفیہ مگر مربوط طریقہ کار وضح کیا ہے، جس کے تحت وزیر اعلی ہاؤس میں تمام درخواستوں کو جمع کرنے کے بعد وزیر اعلی سے متعلقہ محکموں کو تقرریوں کے

(خبر جا ری ہے)

دی جائیں گی، پھر محکمے بھر تیوں کے لئے تقرری نامے جاری کریں گے، حکومت سندھ نے گریڈ 6 پر اور مختلف کوٹے پربھرتیوں کے لئے طریقہ کار وضع کیا ہے ، جس کے تحت ہر ضلع میں ڈپٹی کمشنر کے پاس درخواستیں جمع کرانا ہونگی اور ڈپٹی کمشنراسامی کے حساب سے امیداواروں کے انٹرویو لے کر فہرست کمشنر کو اور پھر کمشنر چیف سیکرٹری کو ارسال کریں گے ، چیف سیکرٹری خالی اسامیوں پر بھرتیوں کے لئے حتمی فہرست وزیر اعلی کو پیش کریں گے ، وزیر اعلی کی منظوری کے بعد فہرستیں متعلقہ محکموں کو تقررری نامے جاری کرنے کے لئے ارسال کردی جائیں گی،حکومت سندھ نے معذور مرد و خواتین کے لئے سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد کوٹہ مختص کردیا ہے،تاکہ صوبے میں رہائش پذیر معذور افراد بھی سر کاری نوکریاں حاصل کرسکے، وزیر اعلی سندھ کے ترجمان رشید چنا کے مطابق بھرتیوں کے لئے حکومتی منصوبہ بندی جاری ہے تاہم وفاقی حکومت کی جانب سے 104ارب روپے کی عدم ادائیگی پر مشکلات کا سامنا ہے، ان کا کہنا تھا کہ گریڈ 6 تک کی اسامی پر مقامی طور پر ڈپٹی کمشنر کے ذریعے درخواستیں وصول کی جائیں گی، جبکہ گریڈ 7 سے اوپر کی اسامی پر آئی بی اے کے زریعے اورگریڈ 16 کی اسامی پر کمیشن ذریعے تقرریاں ہونگی،انہوں نے کہا کہ وزیر اعلی کی ہدایات پر بھرتیوں کا تمام کام شفاف انداز میں کیا جارہا ہے، اس سلسلے میں اخبارات میں اشتہارات جاری کئے جائیں گے۔

کراچی(این این آئی)حکومت سندھ میں 40 ہزار خالی اسامیوں پر بھرتیاں کے لئے ہوم ورک شروع کردیا ،تاہم ماضی میں پیپلز پارٹی کی حکومت پر غیر قانونی بھر تیوں کے الزام پر مقدمات کے بعد اب حکومت سندھ نے سرکاری بھر تیوں کے لئے جامع ،محتاط اور قانونی حکمت عملی ترتیب دی، تاکہ تقرریوں کے بعد بھرتیاں غیر قانونی قرار نہیں دی جاسکیں ، اس سلسلے میں حکومت سندھ نے

خفیہ مگر مربوط طریقہ کار وضح کیا ہے، جس کے تحت وزیر اعلی ہاؤس میں تمام درخواستوں کو جمع کرنے کے بعد وزیر اعلی سے متعلقہ محکموں کو تقرریوں کے لئے فہرستیں دی جائیں گی، پھر محکمے بھر تیوں کے لئے تقرری نامے جاری کریں گے، حکومت سندھ نے گریڈ 6 پر اور مختلف کوٹے پربھرتیوں کے لئے طریقہ کار وضع کیا ہے ، جس کے تحت ہر ضلع میں ڈپٹی کمشنر کے پاس درخواستیں جمع کرانا ہونگی اور ڈپٹی کمشنراسامی کے حساب سے امیداواروں کے انٹرویو لے کر فہرست کمشنر کو اور پھر کمشنر چیف سیکرٹری کو ارسال کریں گے ، چیف سیکرٹری خالی اسامیوں پر بھرتیوں کے لئے حتمی فہرست وزیر اعلی کو پیش کریں گے ، وزیر اعلی کی منظوری کے بعد فہرستیں متعلقہ محکموں کو تقررری نامے جاری کرنے کے لئے ارسال کردی جائیں گی،حکومت سندھ نے معذور مرد و خواتین کے لئے سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد کوٹہ مختص کردیا ہے،تاکہ صوبے میں رہائش پذیر معذور افراد بھی سر کاری نوکریاں حاصل کرسکے، وزیر اعلی سندھ کے ترجمان رشید چنا کے مطابق بھرتیوں کے لئے حکومتی منصوبہ بندی جاری ہے تاہم وفاقی حکومت کی جانب سے 104ارب روپے کی عدم ادائیگی پر مشکلات کا سامنا ہے، ان کا کہنا تھا کہ گریڈ 6 تک کی اسامی پر مقامی طور پر ڈپٹی کمشنر کے ذریعے درخواستیں وصول کی جائیں گی، جبکہ گریڈ 7 سے اوپر کی اسامی پر آئی بی اے کے زریعے اورگریڈ 16 کی اسامی پر کمیشن ذریعے تقرریاں ہونگی،انہوں نے کہا کہ وزیر اعلی کی ہدایات پر بھرتیوں کا تمام کام شفاف انداز میں کیا جارہا ہے، اس سلسلے میں اخبارات میں اشتہارات جاری کئے جائیں گے۔

loading...

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں