اہم خبریں

لندن میں سینکڑوں پاکستانیوں کے شریفوں کے فلیٹس سے کئی گنا زیادہ مہنگے گھرموجود وہ لوگ آرام سے، یہ جیلوں میں دھکے کیوں کھا رہے ہیں ؟شریف فیملی نے ایسا کیا کام کر دیا ہے کہ ان کو نشان عبرت بنا دیا گیا؟جاوید چوہدری کا تہلکہ خیز انکشاف

  جمعرات‬‮ 13 ستمبر‬‮ 2018  |  11:50
اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)ملک کے معروف صحافی ، تجزیہ کار و کالم نگار جاوید چوہدری اپنے کالم میں ایک جگہ لکھتے ہیں کہ یہ خاندان بیک وقت خوش قسمت اور انتہائی بدقسمت ہے‘ میاں نواز شریف تین بار وزیراعظم بنے‘ میاں شہباز شریف بھی تین بار پنجاب کے وزیراعلیٰ رہے‘ملک میں ایک ایسا وقت بھی گزراجب دو بار بڑا بھائی وزیراعظم اور چھوٹا بھائی وزیراعلیٰ تھا‘ یہ عروج آج تک پاکستان کے کسی خاندان کو نصیب نہیں ہوالیکن آپ بدقسمتی بھی دیکھئے‘ یہ خاندان تین بار عرش سے فرش پر آیا‘ ذوالفقار علی بھٹو نے1972ءمیں جسٹس جاوید اقبال کو الیکشن میں

(خبر جا ری ہے)

کے جرم میں ان کی تمام فیکٹریاں قومیا لیں‘ 1990ءاور 1993ءمیں دوبار حکومتیں ختم ہوئیں اور ان پر کرپشن کے خوفناک مقدمے بنے اور جنر ل پرویز مشرف نے 1999ءمیں ان کا سب کچھ چھین لیا ‘پورے خاندان کو جیل میں پھینک دیا اور یہ اب پانامہ کا مقدمہ بھگت رہے ہیں ‘ یہ جیل میں پڑے ہیں‘ آپ بدنصیبی ملاحظہ کیجئے‘ میاں نواز شریف 2004ءمیں اپنے والد کی میت کو کندھا نہیں دے سکے اور یہ اس بار اپنی بیمار بیوی کے سرہانے کھڑے نہیں ہو سکے‘ ان کی والدہ بھی علیل ہیں اور یہ خود بھی بیمار ہیں‘ میاں نواز شریف اور مریم نواز نے پیرول کی درخواست دینے سے انکار کر دیا تھا‘ یہ جیل سے باہر نہیں آنا چاہتے تھے‘ میاں شہباز شریف نے انہیں بڑی مشکل سے قائل کیا‘میاں نواز شریف لاہور پہنچ کر شدید بیمار ہو گئے ہیں‘ آپ اگر انسانی سطح پر سوچیں گے تو آپ کو ان پر ترس آئے گا‘ آخر ان لوگوں کا جرم کیا ہے؟ یہ لوگ اگر سیاست میں نہ آتے تو یہ اس وقت پاکستان کے دوسرے بزنس مینوں کی طرح عیاشی کر رہے ہوتے‘ان کا واحد جرم سیاست ہے‘ لندن شہر میں اس وقت بھی سینکڑوں پاکستانیوں کے گھر ہیں اور یہ گھر شریف فیملی کے فلیٹس سے دس دس گنا مہنگے ہیں‘وہ لوگ آرام سے پھر رہے ہیں اور یہ جیلوں میں دھکے کھا رہے ہیں‘ ملک کے تمام بڑے قانونی ماہرین ایون فیلڈ کے فیصلے کو ”کمزور فیصلہ“ قرار دے رہے ہیں‘ہمیں ماننا ہوگا یہ فیصلہ متنازعہ تھا‘ یہ متنازعہ ہے اور یہ متنازعہ رہے گا‘عدالتوں کو کبھی نہ کبھی یہ حقیقت ماننا پڑے گی لیکن کیا اس وقت کلثوم نواز واپس آ جائیں گی‘ کیا اس وقت ہمارا قانون شریف فیملی کو گیا وقت واپس لوٹا دے گا‘کیا ان آنسوؤں اور ان تکلیفوں کا ازالہ ہو سکے گا؟یہ لوگ اپنے جرم سے زیادہ سزا بھگت رہے ہیں‘یہ سزا ختم ہونی چاہیے‘ بہرحال جو ہوا سو ہوا اور جو ہو رہا ہے وہ ہو رہا ہے لیکن کلثوم نواز ایک بے گناہ عورت تھیں‘ ہم نے انہیں اذیت دی‘ ہم نے ظلم کیا اور اس ظلم میں شامل لوگوں کو جلد یا بدیر اللہ تعالیٰ کے سامنے جواب دینا پڑے گا‘ یہ لوگ حساب ضرور دیں گے۔

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)ملک کے معروف صحافی ، تجزیہ کار و کالم نگار جاوید چوہدری اپنے کالم میں ایک جگہ لکھتے ہیں کہ یہ خاندان بیک وقت خوش قسمت اور انتہائی بدقسمت ہے‘ میاں نواز شریف تین بار وزیراعظم بنے‘ میاں شہباز شریف بھی تین بار پنجاب کے وزیراعلیٰ رہے‘ملک میں ایک ایسا وقت بھی گزراجب دو بار بڑا بھائی وزیراعظم اور چھوٹا بھائی وزیراعلیٰ تھا‘

یہ عروج آج تک پاکستان کے کسی خاندان کو نصیب نہیں ہوالیکن آپ بدقسمتی بھی دیکھئے‘ یہ خاندان تین بار عرش سے فرش پر آیا‘ ذوالفقار علی بھٹو نے1972ءمیں جسٹس جاوید اقبال کو الیکشن میں سپورٹ کرنے کے جرم میں ان کی تمام فیکٹریاں قومیا لیں‘ 1990ءاور 1993ءمیں دوبار حکومتیں ختم ہوئیں اور ان پر کرپشن کے خوفناک مقدمے بنے اور جنر ل پرویز مشرف نے 1999ءمیں ان کا سب کچھ چھین لیا ‘پورے خاندان کو جیل میں پھینک دیا اور یہ اب پانامہ کا مقدمہ بھگت رہے ہیں ‘ یہ جیل میں پڑے ہیں‘ آپ بدنصیبی ملاحظہ کیجئے‘ میاں نواز شریف 2004ءمیں اپنے والد کی میت کو کندھا نہیں دے سکے اور یہ اس بار اپنی بیمار بیوی کے سرہانے کھڑے نہیں ہو سکے‘ ان کی والدہ بھی علیل ہیں اور یہ خود بھی بیمار ہیں‘ میاں نواز شریف اور مریم نواز نے پیرول کی درخواست دینے سے انکار کر دیا تھا‘ یہ جیل سے باہر نہیں آنا چاہتے تھے‘ میاں شہباز شریف نے انہیں بڑی مشکل سے قائل کیا‘میاں نواز شریف لاہور پہنچ کر شدید بیمار ہو گئے ہیں‘ آپ اگر انسانی سطح پر سوچیں گے تو آپ کو ان پر ترس آئے گا‘ آخر ان لوگوں کا جرم کیا ہے؟ یہ لوگ اگر سیاست میں نہ آتے تو یہ اس وقت پاکستان کے دوسرے بزنس مینوں کی طرح عیاشی کر رہے ہوتے‘ان کا واحد جرم سیاست ہے‘ لندن شہر میں اس وقت بھی سینکڑوں پاکستانیوں کے گھر ہیں اور یہ گھر شریف فیملی کے فلیٹس سے دس دس گنا مہنگے ہیں‘وہ لوگ آرام سے پھر رہے ہیں اور یہ جیلوں میں دھکے کھا رہے ہیں‘ ملک کے تمام بڑے قانونی ماہرین ایون فیلڈ کے فیصلے کو ”کمزور فیصلہ“ قرار دے رہے ہیں‘ہمیں ماننا ہوگا یہ فیصلہ متنازعہ تھا‘ یہ متنازعہ ہے اور یہ متنازعہ رہے گا‘عدالتوں کو کبھی نہ کبھی یہ حقیقت ماننا پڑے گی لیکن کیا اس وقت کلثوم نواز واپس آ جائیں گی‘ کیا اس وقت ہمارا قانون شریف فیملی کو گیا وقت واپس لوٹا دے گا‘کیا ان آنسوؤں اور ان تکلیفوں کا ازالہ ہو سکے گا؟یہ لوگ اپنے جرم سے زیادہ سزا بھگت رہے ہیں‘یہ سزا ختم ہونی چاہیے‘ بہرحال جو ہوا سو ہوا اور جو ہو رہا ہے وہ ہو رہا ہے لیکن کلثوم نواز ایک بے گناہ عورت تھیں‘ ہم نے انہیں اذیت دی‘ ہم نے ظلم کیا اور اس ظلم میں شامل لوگوں کو جلد یا بدیر اللہ تعالیٰ کے سامنے جواب دینا پڑے گا‘ یہ لوگ حساب ضرور دیں گے۔

موضوعات:

loading...

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں