اہم خبریں

امریکہ نے ایک بار پھر بھارت نوازی کا ثبوت دیتے ہوئے ایسا بل منظور کرلیا کہ سب ہاتھ ملتے رہ گئے

  جمعرات‬‮ 2 اگست‬‮ 2018  |  17:22
واشنگٹن(آن لائن) امریکی سینیٹ نے ایک بار پھر بھارت نوازی کا ثبوت دیتے ہوئے روسی ہتھیار خریدنے پر بھارت کیخلاف عائد پابندیاں ختم کرنے کا دفاعی بل حتمی طور پر منظور کرلیا ہے‘امریکی سینیٹ میں روسی ہتھیار خرید نے پر بھارت کیخلاف پابندیاں ختم کرنے کا دفاعی بل (نیشنل ڈیفنس آتھورائزیشن ایکٹ 2019) منظور کرلیا گیا۔ جو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو دستخط کیلئے بھجوا دیا گیا ہے‘قبل ازیں یہ بل امریکی ایوانِ نمائندگان سے منظور کیا جاچکا تھا۔ بھارت پر پابندیاں ختم کرنے سے متعلق بل کی منظوری پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس

(خبر جا ری ہے)

تھا کہ وہ سینیٹ میں حزبِ اقتدار اور حزبِ اختلاف، دونوں کی جانب سے افہام و تفہیم کے ساتھ یہ بل منظورکرنے پر بے حد مسرور ہیں کیونکہ یہ بل امریکی اتحادیوں اور شراکت داروں کو سہولت فراہم کرنے کیلئے ہے‘یہ اب ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم ان پالیسیوں کو ذمہ دارانہ طور پر نافذ کرتے ہوئے اپنی کارکردگی اوراحتساب کی روایت پر عمل درآمد کو یقینی بنائیں۔واضح رہے کہ امریکی دفاعی بل میں عسکریت پسندوں کیخلاف اپنے علاقے کا دفاع کرنے کیلئے افغان سیکیورٹی فورسز کی صلاحیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے حقانی نیٹ ورک کا ذکر بھی کیا گیا۔دوسری جانب دفاعی بل میں دوستانہ ممالک کو سرحدی سیکیورٹی آپریشن کے لئے دی جانے والی رقم کی شرائط بھی موجود ہیں،امریکا مسلح فورسز کی صلاحیت کو بڑھانے اور ان کی حمایت کے لئے پاکستان کو سیکیورٹی رقم فراہم کرسکتا ہے تاکہ وہ سکیورٹی میں اضافہ کرسکے۔

واشنگٹن(آن لائن) امریکی سینیٹ نے ایک بار پھر بھارت نوازی کا ثبوت دیتے ہوئے روسی ہتھیار خریدنے پر بھارت کیخلاف عائد پابندیاں ختم کرنے کا دفاعی بل حتمی طور پر منظور کرلیا ہے‘امریکی سینیٹ میں روسی ہتھیار خرید نے پر بھارت کیخلاف پابندیاں ختم کرنے کا

دفاعی بل (نیشنل ڈیفنس آتھورائزیشن ایکٹ 2019) منظور کرلیا گیا۔ جو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو دستخط کیلئے بھجوا دیا گیا ہے‘قبل ازیں یہ بل امریکی ایوانِ نمائندگان سے منظور کیا جاچکا تھا۔ بھارت پر پابندیاں ختم کرنے سے متعلق بل کی منظوری پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس کا کہنا تھا کہ وہ سینیٹ میں حزبِ اقتدار اور حزبِ اختلاف، دونوں کی جانب سے افہام و تفہیم کے ساتھ یہ بل منظورکرنے پر بے حد مسرور ہیں کیونکہ یہ بل امریکی اتحادیوں اور شراکت داروں کو سہولت فراہم کرنے کیلئے ہے‘یہ اب ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم ان پالیسیوں کو ذمہ دارانہ طور پر نافذ کرتے ہوئے اپنی کارکردگی اوراحتساب کی روایت پر عمل درآمد کو یقینی بنائیں۔واضح رہے کہ امریکی دفاعی بل میں عسکریت پسندوں کیخلاف اپنے علاقے کا دفاع کرنے کیلئے افغان سیکیورٹی فورسز کی صلاحیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے حقانی نیٹ ورک کا ذکر بھی کیا گیا۔دوسری جانب دفاعی بل میں دوستانہ ممالک کو سرحدی سیکیورٹی آپریشن کے لئے دی جانے والی رقم کی شرائط بھی موجود ہیں،امریکا مسلح فورسز کی صلاحیت کو بڑھانے اور ان کی حمایت کے لئے پاکستان کو سیکیورٹی رقم فراہم کرسکتا ہے تاکہ وہ سکیورٹی میں اضافہ کرسکے۔

موضوعات:

loading...