اہم خبریں

خلائی مخلوق کی موجودگی کا انکشاف۔۔چاند سے لوٹنے والے خلابازوں نے وہاں کیا دیکھا؟49سال بعد امریکہ نے بڑے راز سے پردہ اٹھا دیا

  اتوار‬‮ 10 جون‬‮ 2018  |  18:06
خلائی مخلوق سے متعلق کئی لوگ دعوے کر چکے ہیں، کسی کا کہنا تھا کہ اس نے اڑن طشتری دیکھی ہے تو کسی نے کہا کہ اس کی خلائی مخلوق سے ملاقات ہوئی ہے ۔ کئی نے تو خلائی مخلوق کے ہاتھوں اغوا ہو کر واپس آنے کا بھی دعویٰ کر رکھا ہے ۔ ان دعوئوں کے سامنے آنے کے بعد ان کے ان دعوئوں کو میڈیا میں جگہ تو ملی تاہم ان کےدعوئوں کو شک کی نظر سے دیکھا جاتا رہااور لوگوں نے ایسا دعویٰ کرنے والے افراد کو مذاق کا نشانہ بنایا تاہم اب آپ کو بتاتے چلیں

(خبر جا ری ہے)

پہلی بار قدم رکھنے والے خلا نوردوں نے بھی زمین سے چاند تک اپنے سفر کے دوران خلائی مخلوق کو دیکھنے کا دعویٰ کیا تھا جس کو اب سچ مان لیا گیا ہے۔ نجی ٹی وی اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق سنہ 1969 میں امریکی خلائی مشن اپالو 11 چاند پر بھیجا گیا تھا اور اس میں موجود خلا نوردوں نے چاند پر قدم رکھ کر، چاند پر پہنچنے والے اولین انسانوں کا اعزاز حاصل کیا تھا۔مشن پر جانے والے خلا نورد اپنے کئی انٹرویوز میں کہہ چکے ہیں کہ ان کا سامنا خلائی مخلوق سے ہوا تھا تاہم ان کے دعوے پر کوئی بھی یقین کرنے کو تیار نہیں تھا۔اب حال ہی میں ان خلا نوردوں کا لائی ڈیٹیکٹر (جھوٹ پکڑنے والی مشین) سے ٹیسٹ کیا گیا جس میں وہ کامیاب ہوگئے، گویا خلائی مخلوق کو دیکھنے کا ان کا دعویٰ درست ہے۔یہ ٹیسٹ امریکی ریاست اوہائیو میں واقع انسٹیٹیوٹ آف بائیو ایکوزٹک بیالوجی میں کیا گیا جس میں اپالو 11 میں موجود خلا نورد بز ایلڈرن نے یہ ٹیسٹ پاس کرلیا۔ٹیسٹ کے نتائج میں ماہرین نے بتایا کہ ایلڈرن جو نیل آرم اسٹرونگ کے بعد چاند پر قدم رکھنے والے دوسرے انسان تھے، اس مشن کی واپسی سے یہ دعویٰ کرتے آرہے ہیں کہ انہوں نے چاند تک اپنے سفر کے دوران خلائی مخلوق کو دیکھا تھا،اب انہوں نےلائی ڈیٹیکٹر کا یہ ٹیسٹ پاس کرلیا ہے چنانچہ ہم یہ مان سکتے ہیں کہ انہوں نے خلائی مخلوق کو واقعتاً دیکھا تھا۔ایلڈرن کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے چاند کے سفر کے دوران ایک قابل مشاہدہ شے دیکھی تھی جو انگریزی حرف تہجی ’ایل‘ جیسی تھی۔ ٹیسٹ لینے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ گو کہ وہ سچ کہہ رہے ہیں تاہم وہ شے کیا تھی، ان کا دماغ اس کی تشریح پیش کرنے سے قاصر ہے۔ٹیسٹ میں خلا نوردوں ایڈگر مچل اورگورڈن کوپر کی آوازوں کا بھی جائزہ لیا گیا۔ یہ دونوں خلا نورد انتقال کرچکے ہیں اور ان کی آواز کے تجزیے کے لیے ان کے ایک پرانے انٹرویو سے مدد لی گئی۔ ایڈگر مچل کا دعویٰ تھا کہ انہوں نے متعدد اڑن طشتریوں کو دیکھا تھا۔ مذکورہ ٹیسٹ میں ان کی آواز کے تجزیے کے بعد سائنس دانوں نے نتیجہ اخذ کیا کہ وہ بھی سچ کہہ رہے تھے۔خلا نوردوں پر مذکورہ ٹیسٹ کے بعد خلائی مخلوق کی تلاش کے مشنز اور تجربات کے لیے ایک نئی راہ کھل گئی ہے۔ سائنس داں پر امید ہیں کہ اس سلسلے میں ان کی کی جانے والی کوششوں کو جلد کامیابی حاصل ہوگی۔

خلائی مخلوق سے متعلق کئی لوگ دعوے کر چکے ہیں، کسی کا کہنا تھا کہ اس نے اڑن طشتری دیکھی ہے تو کسی نے کہا کہ اس کی خلائی مخلوق سے ملاقات ہوئی ہے ۔ کئی نے تو خلائی مخلوق کے ہاتھوں اغوا ہو کر واپس آنے کا بھی دعویٰ کر رکھا ہے ۔ ان دعوئوں کے سامنے آنے کے بعد ان کے ان دعوئوں کو میڈیا میں جگہ تو ملی تاہم ان کےدعوئوں کو شک کی نظر سے دیکھا جاتا رہااور لوگوں نے ایسا دعویٰ کرنے والے افراد کو مذاق کا نشانہ بنایا

تاہم اب آپ کو بتاتے چلیں چاند پر پہلی بار قدم رکھنے والے خلا نوردوں نے بھی زمین سے چاند تک اپنے سفر کے دوران خلائی مخلوق کو دیکھنے کا دعویٰ کیا تھا جس کو اب سچ مان لیا گیا ہے۔ نجی ٹی وی اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق سنہ 1969 میں امریکی خلائی مشن اپالو 11 چاند پر بھیجا گیا تھا اور اس میں موجود خلا نوردوں نے چاند پر قدم رکھ کر، چاند پر پہنچنے والے اولین انسانوں کا اعزاز حاصل کیا تھا۔مشن پر جانے والے خلا نورد اپنے کئی انٹرویوز میں کہہ چکے ہیں کہ ان کا سامنا خلائی مخلوق سے ہوا تھا تاہم ان کے دعوے پر کوئی بھی یقین کرنے کو تیار نہیں تھا۔اب حال ہی میں ان خلا نوردوں کا لائی ڈیٹیکٹر (جھوٹ پکڑنے والی مشین) سے ٹیسٹ کیا گیا جس میں وہ کامیاب ہوگئے، گویا خلائی مخلوق کو دیکھنے کا ان کا دعویٰ درست ہے۔یہ ٹیسٹ امریکی ریاست اوہائیو میں واقع انسٹیٹیوٹ آف بائیو ایکوزٹک بیالوجی میں کیا گیا جس میں اپالو 11 میں موجود خلا نورد بز ایلڈرن نے یہ ٹیسٹ پاس کرلیا۔ٹیسٹ کے نتائج میں ماہرین نے بتایا کہ ایلڈرن جو نیل آرم اسٹرونگ کے بعد چاند پر قدم رکھنے والے دوسرے انسان تھے، اس مشن کی واپسی سے یہ دعویٰ کرتے آرہے ہیں کہ انہوں نے چاند تک اپنے سفر کے دوران خلائی مخلوق کو دیکھا تھا،

اب انہوں نےلائی ڈیٹیکٹر کا یہ ٹیسٹ پاس کرلیا ہے چنانچہ ہم یہ مان سکتے ہیں کہ انہوں نے خلائی مخلوق کو واقعتاً دیکھا تھا۔ایلڈرن کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے چاند کے سفر کے دوران ایک قابل مشاہدہ شے دیکھی تھی جو انگریزی حرف تہجی ’ایل‘ جیسی تھی۔ ٹیسٹ لینے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ گو کہ وہ سچ کہہ رہے ہیں تاہم وہ شے کیا تھی، ان کا دماغ اس کی تشریح پیش کرنے سے قاصر ہے۔ٹیسٹ میں خلا نوردوں ایڈگر مچل اور

گورڈن کوپر کی آوازوں کا بھی جائزہ لیا گیا۔ یہ دونوں خلا نورد انتقال کرچکے ہیں اور ان کی آواز کے تجزیے کے لیے ان کے ایک پرانے انٹرویو سے مدد لی گئی۔ ایڈگر مچل کا دعویٰ تھا کہ انہوں نے متعدد اڑن طشتریوں کو دیکھا تھا۔ مذکورہ ٹیسٹ میں ان کی آواز کے تجزیے کے بعد سائنس دانوں نے نتیجہ اخذ کیا کہ وہ بھی سچ کہہ رہے تھے۔خلا نوردوں پر مذکورہ ٹیسٹ کے بعد خلائی مخلوق کی تلاش کے مشنز اور تجربات کے لیے ایک نئی راہ کھل گئی ہے۔ سائنس داں پر امید ہیں کہ اس سلسلے میں ان کی کی جانے والی کوششوں کو جلد کامیابی حاصل ہوگی۔

loading...

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں